نظم - عمر بھر کا ہُوا زیاں جاناں
Parhlo Urdu

نظم – عمر بھر کا ہُوا زیاں جاناں

Disclaimer*: The articles shared under 'Your Voice' section are sent to us by contributors and we neither confirm nor deny the authenticity of any facts stated below. Parhlo will not be liable for any false, inaccurate, inappropriate or incomplete information presented on the website. Read our disclaimer.

عمر بھر کا ہُوا زیاں جاناں
ہم یہاں اور تم وہاں جاناں

نیند آئی نہیں کئی دن سے
خواب ہونے لگے گِراں جاناں

کون جانے تیری مِری الجھن
کون سمجھے گا یہ زباں جاناں

بعد تیرے یہی رہا عالم
دھول ہی دھول اور دُھواں جاناں

تُو بھی ظاہر نہیں زمانے پہ
میں بھی ہوتا نہیں عیاں جاناں

Snap Chat Tap to follow