خواجہ آصف کی نا اہلی پر شفاعت علی نے ایسی ویڈیو بنا ڈالی جس نے سب کے پیٹوں میں ہنستے بل ڈال دیۓ

خواجہ آصف کی نا اہلی پر شفاعت علی نے ایسی ویڈیو بنا ڈالی جس نے سب کے پیٹوں میں ہنستے ہنستے بل ڈال دیۓ

شفاعت علی کا شمار ایسے لوگوں میں ہوتا ہے جنہوں نے ایک نۓ انداز کی بنیاد رکھی مختلف لوگوں کی نقالی تو ان سے پہلے بھی لوگ کرتے رہے ہیں مگر سوشل میڈيا کے ذریعے سیاسی شخصیات کی نقالی کر کے عوام کے دل کی آواز لوگوں تک پہنجاںے کا ہنر شفاعت علی کے پاس ہی ہے

مسلم لیگ کا برا وقت چل رہا ہے چار سیٹوں کی جانچ سے شروع ہونے والی بات دو اہم شخصیات کی تاعمر نااہلی تک جا پہنچی ہے جس میں سے ایک وزیر اعظم نواز شریف ہیں اور دوسرے خواجہ آصف جن کو گزشتہ روز اقامہ کیس پر سپریم کورٹ کی جانب سے نااہل قرار دیا گیا ہے ۔


خواجہ آصف کی نااہلی کے حوالے سے سوشل میڈیا پر بہت سارے ایسے ردعمل سامنے آۓ جس نے پڑھنے والوں کو کافی محظوظ کیا اس حوالے سے مریم نواز کا ٹوئٹ بھی کافی خبروں کی زینت رہا جس میں انہوں نے کہا کہ جس کو ووٹ کے میدان میں نہیں ہرا سکتے اس کو فکسڈ میچ میں ہرا دو اور عوام اب خواجہ آصف کے  ساۓ کو بھی ووٹ دیں گے

اس کے بعد معروف ممکری کنگ شفاعت علی خان کی جانب سے خواجہ آصف کی نااہلی پر جو ویڈیو سامنے آئی اس نے تو سننے والوں کے دل ہی لوٹ لیۓ ویڈیومیں بلاول عمران خان اور خواجہ آصف کی جس بہترین انداز میں نقل اتاری گئی ہے وہ سید شفاعت علی کی زندگی کی بہترین ترین ممکری کہی جاۓ تو غلط نہ ہو گی

شفاعت علی نے اس ویڈیو میں بلاول کی جانب سے ماضی میں مسلم لیگ ن کی جانب سے بار بار پیپلز پارٹی کی حکومت کو ختم کرنے کی کوششوں کو انتہائی موثر انداز میں بیان کیا گیا ہے اور اس کے جواب میں خواجہ آصف کا یہ کہنا کہ بے عزتی آنے جانے والی چیز ہے اقتتدار نہیں جانا چاہیۓ مسلم لیگ ن کی طرز حکمرانی کو ظاہر کرتی ایک بہترین مثال ہے

 

اس کے بعد خواجہ آصف کا مشہور و معروف جملہ ‘کوئی شرم ہوتی ہے کوئی حیا ہوتی ہے ‘ کو اس ویڈیو میں انتہائی بر محل استعمال کیا گیا ہے اور اس کے بعد خواجہ آصف کا یہ کہنا کہ یہ جملہ اپنے آپ کو کہا ہے محفل لوٹ گیا

یاد رہے کہ خواجہ آصف اس وقت بھی وزیر دفاع کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں اور انہوں نے اسلام آباد ہائی کورٹ کے اس فیصلے کو نہ مانتے ہوۓ اس کو چیلنج کرنے کا اعلان کیا ہے اب دیکھتے ہیں کہ اس حوالے سے ان کی پارٹی یعنی مسلم لیگ ن اس حوالے سے کیا لائحہ عمل اختیار کرتی ہے

To Top