نظم - بند مٹھی

نظم – بند مٹھی

Disclaimer*: The articles shared under 'Your Voice' section are sent to us by contributors and we neither confirm nor deny the authenticity of any facts stated below. Parhlo will not be liable for any false, inaccurate, inappropriate or incomplete information presented on the website. Read our disclaimer.

بند مٹھی میں کیا کیا کچھ ہے

میں تو جانوں ایک ساگر ہے

ساگر تہہ میں ایک گوہر ہے

گوہر اندر سب رنگ بھرے

نیلے پیلے اور لال ہرے

بند مٹھی میں کیا کیا کچھ ہے

میں تو جانوں ایک عنبر ہے

اور عنبر پر ایک تارا ہے

روشن سارا کا سارا ہے

 

مٹھی جو تیری کھل جائے اگر

یہ ساگر عنبر اور گوہر

آن ملیں تیرے اندر

تارے کی چمک ہو گوہر پار

روح اترے رنگوں کی دھار

اے کاش یہ مٹھی کھل جائے

میری آنکھیں بھی جگنو بھر دے

نیندوں میں میری سپنے دھر دے

پھر سپنوں کو رنگیں کر دے

اے کاش یہ مٹھی کھل جائے

To Top