کرتارپورراہداری:پاکستان کے سیّاحتی مقامات میں ایک خوبصورت اضافہ - Parhlo

کرتارپورراہداری:پاکستان کے سیّاحتی مقامات میں ایک خوبصورت اضافہ

کرتارپورراہداری

کرتارپورگردوارہ نہ صرف سکھوں کے لئے ایک مقدس مذہبی مقام کی حیثیت رکھتا ہے بلکہ ان کی ثقافتی روایات کا بھی ایک بہترین نمونہ ہے۔ لاہورسے جنوب مغرب میں واقع ننکانہ صاحب میں جنم لینے والے گرونانک نےاپنی زندگی کےآخری سال کرتارپورمیں گزارے۔ کہا جاتا ہے کہ سکھ مذہب کے بانی، گرونانک سنہ 1522 میں کرتارپورآئے تھےاوراپنی زندگی کےآخری 18 برس انھوں نے یہیں گزارے تھے۔ یہ بھی مانا جاتا ہے کہ جس جگہ گرونانک دیوکا انتقال ہواتھا وہیں پرگردوارہ تعمیرکیا گیا تھا۔

source: 92 news

یہ گردوارہ اپنی نوعیت کا ایک منفرد مقام ہے۔ سرسبز وشاداب کھیتوں کے بیچوں بیچ قائم یہ سفید عمارت دیکھنے والوں کے لئے ایک دلکش منظر فراہم کرتی ہے۔

source: BBC

پُر سکون دیہی ماحول میں واقع سنگِ مرمر سے بنی یہ سفید بلڈنگ نیلے آسمان تلے سبزکھیتوں میں بیٹھے ایک سفید پرندے کی مانند دکھائی دیتی ہے۔ اس گردوارے کے باہر واقع ایک قدیم زمانہ کنواں موجود ہے جسے گرونانک سے منسوب کیا جاتا ہے۔ سکھوں کا یہ ماننا ہے کہ یہ کنواں بابا گرونانک کے استعمال میں تھا اسی لئے یہاں کا پانی سکھوں کے لئے آبِ زم زم کی حیثیت رکھتا ہے۔

Source: Dunya news

کنویں کے ساتھ ہی ایک بم کا ٹکڑا نمائش کے طور پر رکھا گیا ہے جس کے بارے میں یہ کہا جاتا ہے کہ انڈین ایئر فورس نے سنہ 1971 کی جنگ کے دوران اسے پھیکا تھا جسے کنویں نے اپنے اندر لے کردربار کو تباہ ہونے سے بچا لیا تھا۔

Source: geotv

بابا گرونانک کو مقامی مسلمان ایک برگزیدہ ہستی کا درجہ دیتے ہیں جب کہ سکھ انہیں سکھ مذہب کے بانی کے طور پرمانتے ہیں۔ مسلمانوں کی ایک بڑی تعداد یہاں روزانہ فاتحہ خوانی کے لئے آتی ہے۔

Source: weblogtheworld

یہ دربارانڈین سرحد سے چار کلومیٹر دور ہے۔ اس گردوارے کے خدمت کاروں میں مسلمان اورسکھ دونوں شامل ہیں ۔ اسکےعلاوہ ایک وسیع وعریض رقبے پرمشتمل لنگرخانہ

بنایا گیا یے جہاں ہرآنے والے کو لنگر فراہم کیا جاتا ہے۔

Read Also: US Welcomes Kartarpur Corridor Opening And Praises Pakistan!

Source: urdupoint

یہ جگہ ایک تاریخی مقام کی حیثیت رکھتی ہے جو نہ صرف مقدس رسومات کے لئےاستعمال ہوتی ہے بلکہ سکھوں کی قدیم ثقافت کی بھی عکاسی کرتی ہے۔ اگرآپ سکھوں کی ثقافت کے حوالے سے معلومات حاصل کرنا چاہتے ہیں تواس مقام کا دورہ کرنا آپ کی اوّلین ترجیع ہونی چاہیئے۔ تاہم اس جگہ کی اہمیت کا اندازہ سکھوں سے بہتراورکوئی نہیں لگا سکتا جنہوں نے ایک طویل عرصے تک اس مقدس جگہ کے کھلنے کا انتظارکیا ہے ۔اس سے پہلے وہ انڈیا کے ایک مقام سے دوربین کے ذریعے یہاں کی زیارت کیا کرتے تھے۔ البتہ گرونانک کے 550 ویں سالگرہ کے موقع پر پاکستان کے وزیرے اعظم عمران خان کی جانب سے اسے سکھ یاتریوں کے لئے کھول دیا گیا ہے۔

To Top