حق مہر میں 100 کتابیں! دلہن کے انوکھے مطالبےنے سب کو حیران کر دیا

حق مہر میں 100 کتابیں! دلہن کے انوکھے مطالبے نےسب کو حیران کر دیا

مہر میں 100 کتابیں

بدلتے زمانے کے ساتھ ساتھ انسانی سوچ میں بھی واضح تبدیلی دیکھنے میں آئی ہے۔ ہردور کے کچھ الگ اورمنفرد انداز ہوتے ہیں جو لوگوں کی توجہ کا لازمی مرکزبنتے ہیں۔ اگرانسانی سوچ کی بات کی جائے تو یہ کہنا غلط نہیں ہوگا کہ اس کی نئی سوچ کی بدولت ہم فرسودہ روایات کی زنجیروں سے آزاد ہونے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ پرانی روایات کوبدلنا کوئی جرم نہیں کیوںکہ یہ انسا ن کی ہی تو بنائی ہوتی ہیں۔ البتہ وہ انکی پابندی میں یہ بھول جاتے ہیں کہ ان روایات کو بھی زمانے کے مطابق تبدیل ہونے کی ضرورت ہے۔

 اسی تناظرمیں کچھ لوگ ایسے ضرور ہوتے ہیں جونئی مثالیں قائم کرنے سے پیچھے نہیں ہٹتے۔ اور یہی وہ اقدام ہوتے ہیں جو فوراََ لوگوں کی توجہ اپنی طرف مرکوز کرتے ہیں۔ حال ہی میں ایسی ہی ایک مثال انڈیا کی ریاست کیرالہ میں دیکھنے میں آئی جب نئی نویلی دلہن نے اپنے شوہر سے حق مہر کے طور پرنقدی، زیورات جیسی قیمتی اشیاء ترک کرکے100 کتابوں کا مطالبہ کیا۔

مہر میں 100 کتابیں

Source: Twitter

حق مہرمیں نقد کی جگہ کتابیں

اعجازحکیم اوراجنا نظام کا نکاح اکتوبرمیں ہواتھا جس میں اجنا نے اپنےشوہرسے حق مہرمیں 100 کتابوں کی خواہش کا اظہار کیا تھا۔ ابتدائی طور پردی گئی فہرست کے مطابق اعجاز صرف 97 کتابیں ہی جمع کر سکا۔ لیکن اب انکی تعداد 99 ہوگئی ہے۔ اس مطالبے نے سب کو حیران تو ضرور کیا لیکن اس کے منظرِعام پرآتے ہی لوگوں نے اس خیال کوخوب سراہا۔ تاہم دولہا دلہن نے اس بات کو خفیہ رکھا ہوا تھا لیکن انکے کچھ قریبی دوستوں  نےاسے سوشل میڈیا پر پوسٹ کرکے وائرل کردیا۔

رپورٹ کے مطابق ان کتابوں میں قرآن، بائبل اور گیتا کے علاوہ خالد حسینی اورموراکامی کے ناول شامل ہیں۔ البتہ آخری کتاب میں انڈیا کا آئین شامل ہے جسکے ملتے ہی دلہن کی یہ خواہش مکمل ہو جائیگی۔

بظاہرتوایسی روایات قائم ہونے میں کوئی برائی محسوس نہیں ہوتی لیکن اس طرح کی سوچ معاشرےکوقبول کرنے میں تھوڑا وقت لگ جاتا ہے۔ بس ضرورت اس امرکی ہے کہ منفی پہلو اجاگر کرنے کے بجائے مثبت پہلو پر توجہ مرکوز کی جائے تونئی روایات کو باآسانی قبول کیا جا سکتا ہے۔

To Top